اردو اقتباسات

انسانی روح کے لئے سب سے زیادہ مقطر اور طیّب محبت کی ضرورت ہوتی ہے۔ لیکن جب سے بنی قابیل بنی ہابیل پر غالب آئے اصلی اور صادق محبت کا چشمہ قریب قریب سوکھ گیا۔ اب جا بجا ہوس تھی۔۔۔۔۔۔۔ جنسی تجربات تھے۔۔۔۔۔ معکوس رابطے، نافراہمی اور نا آسودگی کیمحبت تھی۔۔۔ لوگ ایک دوسرے کولتاجیض کی طرح استعمال کرتے اور چھوڑ جاتے، محبت میں کجیاور کم فہمی کا رواج عام ہو گیا۔
محلوں میں ان کی ناآسودہ کہانیاں پھرنے لگیں۔۔ اخباروںمیں بے امن قصے بیان ہونے لگے۔ جب سے بنی قابیل غالب آئے تھے۔ سچی اور پاک محبتکی بارش کے لئے کوئی دعا نہ مانگتا۔ سب ہی جنسی محرومی، قلبی تھکن اور روح کے خلاء کی وجہ سے دیوانے ہو رہے تھے۔ ہر وہ شخص جس کی روح میں حرام مال پہنچ رہا ہو، چہرے بشرے سے راجہ گدھ بن جاتا ہے۔۔۔۔۔ اس کی آنکھیں دھنسی ہوئی، چہرہ سبزی مائل پیلا، بال بکھرے ہوئے اور ہڈیاں نمایاں ہوتی ہیں۔ روح کا حرام کھانے والا ہزاروں میں پہچانا جاتا ہے۔۔۔ ہزاروں میں لاکھوں میں پھر کیا عجیب تھا کہ میرا ہم شکل ساندہ کلاں میں دوسرا کوئی نہ تھا۔۔
میں اپنے محلّہ کا اپنے کالج کاسب سے بڑا راجہ گدھ تھا!

اقتباس راجہ گدھ