Monday, July 20, 2015

حیا گر منہ چھپاتی ہے ادا پردہ اُٹھاتی ہے
یہ شوخی کب بٹھاتی ہے قیامت ہو ہی جاتی ہے
داغ دہلوی