Friday, December 23, 2016

اپنی عزت اپنے ہاتھ

کسی رسالے میں پڑھی ایک پُرانی کہانی اب بھی یاد ہے، دولڑکے ہاسٹل میں روم میٹ تھے، ایک دن ان کے کمرے میں چوہا گُھس آیا۔۔۔۔۔
دونوں کو شرارت سوجھی کہ کیوں نہ چوہے کو تنگ کیا جائے، دروازہ بند کردیا، کمرے میں صرف چارپائیاں موجود تھیں، انھیں درمیان میں کھڑا کردیا گیا اور پھر دونوں نے اُسے ستانا شروع کردیا۔۔۔۔۔۔
اس کے کے پیچھے بھاگتے، اُسے گھیرتے اورپھر قہقہے لگاتے جاتے ۔۔۔۔۔۔
چوہا بیچارہ پریشان کہ نہ باہرجانے کا راستہ، نہ بچنے کا کوئی اور طریقہ۔۔۔۔۔۔
بھاگتے بھاگتے بالکل نڈھال ہوگیا اور اب اُس سے بھاگا بھی نہیں جارہا تھا۔۔۔۔۔۔
دونوں دوست اس کو دیوار کے ساتھ گھیر کر کھڑے ہوگئے۔۔۔۔۔
چوہے میں بھاگنے کی ہمت تو نہ تھی اورپھر اُس نے آخری حربہ استعمال کیا، پنجوں کے بَل کھڑا ہوگیا اور غُرانا سا شروع ہوگیا۔۔۔۔۔۔
پہلے تو دوست مذاق سمجھے لیکن پھر انہیں ایسے لگا کہ یہ ان پر حملہ کردے گا۔۔۔۔۔۔
فوراً دروازہ کھولا اور اُسے کمرے سے نکال دیا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چوہا کتنا بے ضرر جانور ہے لیکن جب اُسے حدسے زیادہ زِچ کیا گیا اور ستایا گیا تو وہ بھی ردِ عمل کے لیے تیار ہوگیا۔۔۔۔۔۔
ہمارے اردگرد کتنے ایسے لوگ ہیں جوہمارے ماتحت ہوتے ہیں چاہے گھر ہو یا دفتر۔۔۔۔۔۔
ایک تو طریقہ یہ ہے کہ ان سے محبت سے پیش آیا جائے اور ان پر بلاوجہ رعب نہ ڈالا جائے، بلاوجہ سختی نہ کی جائے۔۔۔۔۔۔
نہ ہی انھیں اتنا زِچ کیا جائے کہ انھیں بالکل دیوار سے ہی لگا دیا جائے۔۔۔۔۔۔
جوشخص دیوارسے لگا دیا جائے اُس کا ردِ عمل منفی اوراُبال والا بھی آسکتا ہے۔۔۔۔۔۔
ہر انسان کی برداشت کی ایک حد ہے، اختیارات کے پیچھے اُس کی برداشت کی حدود کو پامال نہ کیا جائے۔۔۔۔۔
اگر بالفرض وہ ردِ عمل نہیں بھی دیتا لیکن اُس کی مظلومیت اور آہ عرش ہلاسکتی ہے، دنیامیں بھی پکڑ ہوسکتی ہے اور آخرت کا عذاب تو ویسے ہی بہت بڑا ہے۔۔۔۔۔
اپنے ماتحتوں سے اچھا سلوک کریں، توازن کے ساتھ کہتا ہوں، یہ مطلب بھی نہیں کہ وہ آپ کی بات ماننا ہی چھوڑ دیں یا کام صحیح نہ کریں۔۔۔۔۔۔
گھرہو یا کوئی بھی جگہ، سکون کی بنیاد اس فارمولے پر ہے کہ محبت اورتادیب میں توازن ہواوربلاوجہ سختی کا عنصرمنفی کردیا جائے اور کسی کا مذاق اُڑانا تو بہت ہی گھٹیا طرزِ عمل ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔